Tue. Jun 25th, 2024
343 Views

ہٹیاں بالا(بیورورپورٹ)ضلع جہلم ویلی کی یونین کونسل نڑدجیاں کے گاؤں گہل جبڑا میں تقریبا دو سالہ بچہ سانپ کے کاٹنے سے جاں بحق ہو گیا، نماز جنازہ ادا،آبائی علاقہ میں آہوں اور سسکیوں کے سائے تلے سپرد خاک۔تفصیلات کے مطابق تقریبا دو سالہ معصوم بچے سید علی کاظمی ولد سید شفیق کاظمی کو صبح نو بجے کے قریب سانپ نے کاٹ لیا جس کے بعد والدین نے اس کا دیسی علاج اور دم کروایا لیکن رات گئے اس کی طبعیت زیادہ خراب ہو گئی تو ورثاء اسے لیکر رات بارہ بجے ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال ہٹیاں بالا پہنچے،بچے کی تشویشناک حالت کو دیکھتے ہوئے ڈاکٹرز نے ابتدائی طبعی امداد دینے کے بعد سی ایم ایچ مظفرآباد ریفر کردیا جہاں پر وہ چند گھنٹے تک زندگی اور موت کی کشمکش میں رہنے کے بعد زندگی کی بازی ہار گیا،معصوم بچے کی نماز جنازہ گہل جبڑا میں ادائیگی کے بعد آبائی قبرستان میں سپرد خاک کردیا ہے،اس واقعہ پر علاقہ کی فضا سوگوار ہے، ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال ہٹیاں بالا کے ڈاکٹرز کی جانب سے جاری ایک آگاہی میسج میں کہا گیا ہے کہ اگر کسی کو سانپ کاٹ لے تو خداراہ دیسی ٹوٹکوں،جیسے کٹ لگانا،رسی سے باندھنا،یا دم کروانا جیسے طریقوں پروقت ضائع کرنے کے بجائے مریض کو فوری طور پر ہسپتال پہنچائیں، اپنے پیاروں کے معالج خود نہ بنیں،گہل جبڑا کا رہائشی بچہ جسے والدہ کے مطابق صبع نو بجے سانپ نے کاٹا (جس کا کوئی واضع ثبوت بھی نہیں تھا) کو اس کے گھر والوں نے گھر پر ہی رکھ کر دیسی علاج، دم کرواتے رہے،بچے کی دائیں ٹانگ کو گاؤں کے کسی عطائی نے ران کے قریب سے کس کر باندھ دیا،جس سے پوری ٹانگ میں خون کی روانی شدید متاثر ہوئی بچہ صرف ان دیسی ٹوٹکوں کی وجہ سے قریب المرگ ہوا تو ورثاء اسے لیکر رات 12 بجے ہسپتال پہنچے،اپنے پیاروں کا درست اور بروقت علاج آپکی ذمہ داری ہے،تانکہ آئندہ کسی اور قیمتی جان کا ضیاع نہ ہو۔۔۔

By ajazmir