Tue. Jul 27th, 2021
316 Views

آزادکشمیر کی وکالت کے ماتھے کا جھومر ،راجہ مظہروحید خان
تحریر :عبدالوحیدکیانی
اسلام میں وکالت کی ضرورت و اہمیت کو تسلیم کیا گیا ہے اور حدیث و فقہ کی بیشتر کتابوں میں اس حوالہ سے ”کتاب الوکالة“ کے نام سے مستقل ابواب موجود ہیں جن میں زندگی کے مختلف شعبوں میں وکالت اور نمائندگی کی ضرورت کو تسلیم کرتے ہوئے اس کے قوانین و ضوابط وضع کیے گئے ہیں۔ وکالت کی مختلف صورتوں میں ایک قسم ”وکیل خصومت“ کی بھی ہے جس میں عدالتوں میں مدعی اور مدعا علیہ کی طرف سے پیش ہونے والے وکلاءکو شمار کیا جا سکتا ہے۔ اور اس کا مطلب یہ ہے کہ کوئی بھی شخص جو عدالت میں اپنے کیس کو مناسب انداز میں پیش کرنے کی اہلیت نہ رکھتا ہو، کسی بھی ایسے شخص کی خدمات حاصل کر سکتا ہے جو اس کی بات کو بہتر انداز میں پیش کر سکے اور مقدمہ میں اس کی صحیح نمائندگی کر سکے۔ امیر المومنین حضرت علی کرم اللہ وجہہ کے بارے میں روایات میں آتا ہے کہ انہوں نے اس قسم کے معاملات میں حضرت عقیل بن ابی طالب کو وکیل خصومت مقرر کر رکھا تھا۔ اور جب وہ معذور ہوگئے تو ان کی جگہ حضرت عبد اللہ بن جعفر کو انہوں نے اپنا وکیل خصومت مقرر کر دیا،اقتدار واختیار کے حامل شخصیات کے علاوہ ایک قانون دان کی اہلیت میں بھی عدل وانصاف کی صفت کو مرکزی حیثیت حاصل ہے ،وکلاءاور عوام کا ربط وتعلق وابستہ ہوتا ہے ان کےلئے عوامی مسائل و معاملات کی یکسوئی عدل وانصاف کے اصولوں کے متقاضی ہوتی ہے ۔پیش آمدہ واقعات معاملات اورمسائل کا منصفانہ حل اورمیرٹ پر عوام کے حقوق پورا کرنا انصاف کہلاتا ہے ۔اس سلسلہ میں ایک حدیث مبارکہ ہے (ترجمہ )حضرت عبداللہ بن عمر وبن العاص ؓسے روایت ہے کہ سید نامحمد رسول اللہ ﷺنے ارشاد فرمایا کہ اہل حکومت اورارباب اقتدار و اختیار میں سے عدل وانصاف سے اپنے فرائض انجام دینے والے اللہ تعالیٰ کے ہاں (یعنی آخرت میں )نور کی نشستوں پرہوں گے اللہ تعالیٰ کے دائیں جانب ،یہ وہ لوگ ہونگے جو اپنے فیصلوں میں اوراپنے اہل وعیال اورمتعلقین کے معاملات میں اور اپنے اختیارات کے استعمال کے بارے میں عدل وانصاف سے کام لیتے ہیں (صحیح مسلم )آزادکشمیر کے شعبہ قانون میں ایک منفرد نام راجہ مظہروحید خان کا ہے جو شعبہ قانون میں ایک مستند حوالہ کی حیثیت رکھتے ہیں ،راجہ مظہر وحید خان کا تعلق ضلع باغ کے تعلیم یافتہ گھرانے سے ہے ان کے والد محترم پروفیسر راجہ عبدالوحید خان آزاد کشمیر کے نامور ماہر تعلیم سماجی رہئ ایجوکیشن سوسائٹی کے بانی اور بزرگ شخصیت ہیں ،موصوف کی والدہ محترمہ ریٹائرڈ صدر معلمہ ہیں جو ریاست جموں و کشمیر کے مشہور مذہبی و سیاسی رہنماء شیر ریاست پونچھ مولانا عبدللہ کفل گڑھوی کی صاحبزادی ہیں۔راجہ مظہر وحید خان حال علامہ اقبال کالونی باغ میں رہائش پزیر ہیں اور مظفرآباد میں وکالت کرتے ہیں موصوف 27 جولائی 1979 کو گاو¿ں مخدوم کوٹ میں پیدا ہوئے ابتدائی تعلیم گورنمنٹ مڈل سکول مخدو مکو ٹ جماعت نہم تک گورنمنٹ بوائز ہائی سکول پنیالی اور میٹرک کا امتحان 1995میں گورنمنٹ پائلٹ ہائی سکول باغ سے پاس کیا۔1997 میں گورنمنٹ ڈگری کالج باغ سے ایف ایس سی کرنے کے بعد طلباءکی سیاست میں حصہ لینا شروع کیا اس دوران آپ مسلم سٹوڈنٹس فیڈریشن کالج باغ کے جنرل سیکرٹری منتخب ہوئے اس دوران کالج کے زیر اہتمام منعقد ہونے والے تقریری مقا بلوں میں حصہ لیا اور بہترین ڈیبیٹر کا اعزاز حاصل کیا اور1998 میں انٹر یونیورسٹی ڈیبیٹ میں اے جے کے کی نمائندگی کی سال 1999 میں بی اے کا امتحان گورنمنٹ پوسٹ گریجویٹ کالج باغ سے پاس کیا اور آ زاد کشمیر یونیورسٹی کے شعبہ انگریزی میں ایم اے میں داخلہ لیا۔ اس دوران طلبا سیاست میں دلچسپی لی مسلم سٹوڈنٹس فیڈریشن کی تنظیم میں مختلف عہدوں پر کام کیا اور تنظیم کے پلیٹ فارم سے پروگرامات منعقد کیے آزاد کشمیر یونیورسٹی کی جانب سے اے کے نیشنل والی بال چمپین شپ میں بطور کھلاڑی حصہ لیا۔سال 2002 میں ایم اے انگریزی کرنے کے بعد سندھ مسلم گورنمنٹ لاءکالج کراچی میں ایل ایل بی میں داخلہ لیا اور سال 2005 تک زیر تعلیم رہے 2005 میں اپرنٹس شپ شروع کی اور 2006 میں لوئر کورٹ میں وکالت شروع کی سال 2007 سے 2010 ایڈھاک سیکشن آفیسر تعینات رہے اور اس دوران آزاد کشمیر یونیورسٹی سے ایل ایل ایم کی ڈگری حاصل کی سال 2010 میں سنٹرل بار کی ممبر شپ حاصل کی اور اپریل 2011 میں ایڈوکیٹ ہائی کورٹ کی حیثیت سے وکالت کا آ غاز کیا اس دوران مختلف محکموں میں بطور لیگل ایڈوائزر اپنی خدمات سر انجام دی اور اہم نوعیت کے سینکڑوں مقدمات میں کامیابی حاصل کی اس کے علاوہ صدر آزاد کشمیر نے موصوف کو پیشہ ورانہ خدمات کے صلے میں دو مرتبہ پاکستان ریڈ کریسنٹ سوسائٹی آزاد کشمیر منیجمنٹ بورڈ کا ممبر نامزد کیا۔ موصوف نے سال 2016 کے آ خر میں سپریم کورٹ کا لائسنس حاصل کیا اور اس وقت جسٹس فرسٹ لاءایسوسی ایٹ کے ذریعے اپنے ایسوسی ایٹ کے ہمراہ قانونی خدمات سر انجام دے رہے ہیں اس کے علا وہ موصوف شعبہ قانون آزاد کشمیر یونیورسٹی میں سال 2008 سے وزیٹنگ پروفیسر کے طور پر درس و ni کا سینئر نائب صدر بنا کر ان کی سیاسی و قانونی خدمات کا اعتراف کیا !

Avatar

By ajazmir