Tue. Jun 22nd, 2021
285 Views

فالٹ لائن
طاہر احمد فاروقی
آزادکشمیر کورٹ بارکے سینئر جسٹس صداقت حسین راجہ بطور قائم مقام چیف جسٹس ہائی کورٹ حلف اُٹھانے کے بعد فرائض کی ادائیگی کا آغاز کر چکے ہیں یہ بہت اعلیٰ اعزاز بھی ہے اور بطور منصف امتحان تو ہے مگر جن حالات میں ان پر ذمہ داری عائد ہوئی ہے وہ بہت ہی کٹھن ہیں ایک سال سے یہاں سپریم کورٹ اور ہائی کورٹ کے مستقل چیف جسٹس تعیناتی کا معاملہ کسی نہ کسی وجہ سے لٹکا ہوا ہے تو سپریم کورٹ صرف قائم مقام چیف جسٹس راجہ سعید اکرم پر مشتمل ہے ان کے ساتھ کوئی دوسرا جج موجود ہی نہیں ہے اللہ رب العزت قائم مقام چیف جسٹس ہائی کورٹ جسٹس شیراز کیانی کو صحت کاملہ عطاء فرمائے جو علالت کے باعث فرائض کی سرانجام دہی سے قاصر ہیں جن کی علالت کے دوران بطور قائم مقام چیف جسٹس اب سینئر جسٹس صداقت حسین راجہ فرائض سرانجام دے رہے ہیں اور سپریم کورٹ کی طرح ہائی کورٹ بھی صرف ایک جج یعنی قائم مقام چیف جسٹس صداقت حسین راجہ پر مشتمل ہے‘ چیف جسٹس ہائی کورٹ نے ناصرف ہائی کورٹ میں بطور منصف مقدمات کی سماعت فیصلے اور مقدمات کی ججز میں تقسیم کار ماتحت سٹاف کے نظم و نسق کو چلانا ہوتا ہے بلکہ اپنے ماتحت باقی تمام ذیلی عدالتوں ان کے نظام کو بطور سربراہ دیکھ بھال کی ذمہ داری نبھانی ہوتی ہے یہ سب اُمور اور پھر عدالتی بحران کے حالات میں ایک ہی جج ساتھ قائم مقام چیف جسٹس ہونے کے ناطے آزمائشوں کی اعصاب شکن گھڑیاں ان پر آ چکی ہیں‘ بطور باعمل وکیل طویل تجربے وائس چیئرمین بار کونسل کی حیثیت سے بار کونسل کو اپنے پیروں پر کھڑے کرنے وکلاء کی فلاح کیلئے جرات مندانہ اقدامات سمیت آئین و قانون کی بالادستی‘ عدلیہ کے وقار کیلئے جدوجہد سمیت بحیثیت وکیل اور بطور جج وہ معاشرے کے پسے طبقات کمزور حالات والے انسانوں کو انصاف دلانے ان کے ساتھ تعاون سہارا بننے کے تناظر میں بخوبی جانتے ہیں کہ انصاف کے حصول کیلئے ایک عام آدمی خصوصاً بے کس‘ بے بس مظلوم کو کن کن مصائب کا سامنا کرنا پڑتا ہے ناصرف ماتحت عدلیہ بلکہ پولیس سمیت ہر محکمہ میں کہاں کہاں کیا کیا سائلین حقداروں کو حق لینے کیلئے کن مسائل رکاوٹوں کا سامنا ہوتا ہے اور نامور وکلاء کے بعد باقی تمام وکلاء کمیونٹی کے ایشوز‘ انتظامی پیشہ وارانہ مراحل ہوں یا پھر مجموعی اندرونی بیرونی پیچیدگیاں ہوں سب بخوبی جانتے ہیں یہی وجہ ہے ان کے بطور قائم مقام چیف جسٹس بننے پر وکلاء کی طرف سے مجموعی طور پر بہت خوشی مسرت کے جذبات کا تسلسل جاری ہے کہ سب کو ان سے بہت زیادہ توقعات اس لیے ہیں کہ سب سمجھتے ہیں قائم مقام چیف جسٹس جرات مند بہادر اور اُصولوں پر ڈٹ جانے والے انسان ہیں جن کے کردار اور جدوجہد جیسی خوبیوں سے باعمل بہتری کے راستے کھل گئے اور رفتہ رفتہ نتائج بھی سامنے آئیں گے مگر اس کے لیے صرف توقعات اُمیدیں خوشی مسرت کا اظہار کرتے رہنا ہی کافی نہیں ہے بلکہ عدلیہ کے بحران کے حل کی طرف بھرپور قوت کے ساتھ مسلسل کردار ادا کرتا رہنا ناگزیر ہے اس بحران اور ماضی سے اب تک حالات کو الجھائے رکھنے کے ذمہ دار اصل کردار کون ہیں ان کو سامنے لانے اور جزا سزا کے عمل سے گزارے بغیر مستقل حل ممکن نہیں ہو سکے گا یہ کورٹ اور بار کے نئے سفر کی داستان بنے گا کہ وہ کیسی ہو گی؟

Avatar

By ajazmir