Thu. Jul 25th, 2024
128 Views

ہٹیاں بالا(بیورورپورٹ)جمعیت علماء اسلام پاکستان کے مرکزی رہنماء و سابق ایم پی اے مولانا،مفتی کفایت اللہ نے کہا ہے کہ پاکستان اسلام کے نام پر معرض وجود میں آیا،آج تک اسلامی نظام کا نفاذ نہیں ہوا ملک سے مہنگائی،بے روزگاری، بدامنی کو دور کرنے کا ایک ہی راستہ ہے کہ نظام مصطفیٰؐ کو تخت پر لے آئیں پاکستان میں موجود تمام نظام فیل ہوگئے جمہوریت،مارشل لا،عدلیہ، سمیت تمام محکموں کے نظام فیل ہیں بس نظام مصطفی ﷺسے ہی پاکستان میں خوشحالی آ سکتی ہے،پاکستانی حکمرانوں سے پاکستان مانگتا ہوں کہ ملک علماء کے حوالے کرو تو دنیا دیکھے گی کہ اسلامی ریاست میں نظام مصطفی کے نفاذ سے کیسی تبدیلی آئی ہے۔

ان خیالات کا اظہار جے یو آئی پاکستان کے رہنماء مولانا،مفتی کفایت اللہ نے جمیعت علماء اسلام ضلع جہلم ویلی کے زیر اہتمام گورنمنٹ ہائی سکول نوگراں میں جے یو آئی مظفرآباد ڈویژن کے امیر مولانا پروفیسر الطاف حسین صدیقی کی زیر صدارت منعقدہ ایک روزہ عظیم الشان نظام مصطفیﷺ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، تقریب میں جمیعت علما ء اسلام پاکستان کے مرکزی رہنما مفتی منیب الرحمن، سیکرٹری جنرل جمیعت علماء اسلام آزاد کشمیر مولانا امتیاز عباسی،معروف نعت خواں سید اعجاز کاظمی، مولانا جمیل احمد جامی،پروفیسر رضا الرحمن صدیقی،لیاقت علی اعوان،مولانا عمران ہمدانی،مولانا احتشام الحق،یوسف تنولی و دیگر نے خطاب کیا،کانفرنس میں لمنیاں،شاریاں،سرائی، گوہرآباد، چڑوئی،کھانڈہ بیلہ،بٹار،ہٹیاں اور نوگراں کی عوام نے بڑی تعداد میں شرکت کی، مہمان خصوصی مولانا مفتی کفایت اللہ نے کہا کہ نوگراں میں عظیم الشان نظام مصطفیؐ کانفرنس کے انعقاد پر منتظمین پروفیسر رضاالرحمن صدیقی،مولانا احتشام الحق سمیت اہلیان نوگراں کو مبارک باد پیش کرتا ہوں، ملک میں نظام مصطفٰیؐ کا نفاذ ہو تو پاکستان کی تقدیر بھی بدل جائے گی غریب عوام کوفوری، سستا انصاف ملے گا، تعلیمی نظام، صحت میں بہتری آئے گی، ملک پاکستان ترقی و خوشحالی کی طرف گامزن ہو گا حرمت رسول ﷺ پر کسی بھی قسم کا سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا حضورؐ کی عزت، ناموس پر کسی صورت آنچ نہیں آنے دیں گے پاکستان میں سارے نظام استعمال کرلیے گئے مگر کسی بھی نظام سے عوام اور ملک کو فائدہ نہیں ہوا، سیکولر نظام سب سے پہلے ابو جہل نے پیش کیا تھا،پاکستان کلمہ کی بنیاد پر بنا لیکن اس میں سیکولرنظام چل رہا ہے علماء انشاء اللہ سیکولر نظام کا خاتمہ کر کے اسلامی نظام نافذ کریں گے خدا کی قسم کھا کر کہتا ہوں پاکستان میں نظام مصطفی ﷺکے نفاذ سے ہی ترقی ہو گی جب نظام مصطفی ﷺکا نفاذ ہو گا تو پاکستان کو ترقی کرنے سے دنیا کی کوئی طاقت نہیں روک سکتی ہے،سازشیوں نے جناح والے پاکستان کو ٹکروں میں تقسیم کر دیا اگر نظام مصطفی ہوتا تو اسرائیل، فلسطین پر ظلم کرنے کی ہمت نہ کرتا، پاکستان کے اندر ڈکٹیٹر شپ کی حکومت چل رہی ہے جس کاجو دل چاہتا ہے وہی کرتا ہے غریب عوام فاقوں سے خودکشیاں کر رہی ہے ایک مخصوص طبقہ پاکستان پر مسلط ہے علماء کرام ان کا ہر محاظ پر راستہ روکیں گے، نظام مصطفی کے نفاز کے لیے ہر جگہ آواز بلند کرتے رہیں گے،جمیعت علماء اسلام مظفرآبادآباد ڈویژن کے امیر پرفیسر مولانا الطاف حسین صدیقی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نظام مصطفی ؐکے بغیر ہم کیسے کسی سے انصاف کی امید رکھ سکتے ہیں مسلمانوں کا حاکم، عادل، انصاف پسند ہونا چاہیے بائیس لاکھ مربع میل پر حکومت کرنے والے حضرت عمر ؓساری رات گشت کرتے تھے کہ کوئی بندہ بھوکا تو نہیں سویا،کوئی کسی تکلیف میں تو نہیں ہے یہ اسلام کا نظام تھا آج پوری قوم پکار رہی ہے فلاں چور فلاں چور ہے ہم خود اس کے ذمہ دار ہیں نظام مصطفیؐ کو ریاست میں نافذ کیا جائے تو ریاست میں کرپشن،دھوکہ دہی،نا انصافی،بے حیائی ختم ہو جائے گی ہر طرف خوشحالی ہو گی اللہ پاک کی رحمتیں ہونگی مقبوضہ کشمیر میں ہماری ماؤں، بہنوں کی عصمت دری کی گئی، ماؤں نے بیٹے، بہنوں نے بھائی، بیویوں نے شوہر قربان کیے، ہماری ناقص پالیسیوں کے باعث کشمیر ہندوستان نے اپنے قبضے میں کر لیا اب کشمیر کی وحدت کے لیے ہمیں جہاد کرنا پڑے گا جب ہم کشمیر کی بات کرتے ہیں تو ہم پر الزام لگایا جاتا ہے کہ ہم پاکستان کے مخالف ہیں ہم پاکستان کے مخالف نہیں ہم پاکستانی ہیں پاکستان ہمارا ہے لیکن ہم کشمیر پر کوئی سودا بازی قبول نہیں کریں گے جب تک سارا کشمیر ایک نہیں ہوتا تب تک ہم کشمیری کسی سودا بازی کو قبول نہیں کریں گے جب سارا کشمیر آزاد ہو جائے پھر کشمیروں کو حق دیا جائے کہ وہ الحاق پاکستان کے حامی ہیں یا خود مختار رہنا چاہتے ہیں ہمارا ایک ہی مطالبہ ہے کہ کشمیر کو آزاد کیا جائے، ہم اپنی خوداری کا سودا نہیں ہونے دیں گے کشمیر ہمارا ہے ہم گردنیں تو کٹا سکتے ہیں لیکن کشمیر کا سودا قبول نہیں کریں گے کشمیریوں سے درخواست کرتا ہوں کہ جاگتے رہنا سوداگروں نے کشمیر کو تقسیم کرنے کے لیے تیاریاں شروع رکھی ہیں تقسیم کشمیر کے ایجنڈے کو جوتی کی نوک پر رکھتے ہیں کشمیر کی شناخت کو ختم کرنے والے کان کھول کر سن لیں اگر کشمیر کی سودا بازی کی گئی تووہ انجام ہو گا جو دنیا دیکھے گی، مولانا امتیاز عباسی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کا قیام 14 اگست 1947 ء کو ہوا، پاکستان کلمہ کی بنیاد پر بنا کفار نے پوری قوت کے ساتھ اسلامی نظام کو روکنے کی کوشش کی نیلا بٹ ہو یا کوئی اور مقام ہمارے بزرگوں نے دشمن کا مقابلہ کلہاڑیوں سے جہاد کر کے کیا ہم پہاڑوں پر رہنے والے لوگ اسلامی نظام کے مطابق اس ریاست میں زندگیاں گزاریں گے 76 سال گزرنے کے بعد بھی اس ریاست کے اندر عدالتوں میں نظام مصطفی ؐنہیں آسکا اسمبلی، پولیس، قانونی اداوں میں آج بھی انگریز اور ڈوگرہ کا قانون چل رہا ہے آزادکشمیر کا شہری بھی آج تک ڈوگرہ نظام کے تحت عدالتوں کے اندر سزائیں کاٹ رہا ہے بدقسمتی سے آج پاکستان کے اندر جاگیر داروں کا راج ہے پاکستان کے اندر غریب عوام کو دبایا جا رہا ہے پاکستان کے اندر اگرعلماء حق نہ ہوتے تو جاگیرداروں، وڈیروں نے غریب عوام کو ختم کر دینا، اسلام مخالف قوتوں کو پاکستان کے اندر مسلط کر دینا تھا، علماء حق نے نظام مصطفی کے لیے قربانیاں دیں پاکستان کو اگر بچانا،معاشی ترقی دینا ہے تو پاکستان کے لیے اسلامی نفاذ ضروری ہے مرکزی رہنما جمیعت علماء اسلام پاکستان مفتی منیب الرحمن نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کی نسبت آزاد کشمیر کا خطہ شرح خواندگی میں بہت آگے ہے یہاں کے تعلیم یافتہ لوگ ہیں اللہ تعالی نے اس خطہ کے لوگوں کو بہت ساری صلاحیتوں سے نوازا ہوا ہے اللہ نے فرمایا ہے میں نے جس کے لیے آپ کو پیدا کیا وہ مذہب اسلام ہے اللہ نے جب حضرت محمدﷺ کو پیدا فرمایا تو جہالت کا خاتمہ ہوا جب اس دنیا کے سامنے نبوت کا تاج حضرت محمدﷺ کو پہنایا گیا اس کے بعد کوئی نبوت کا دعوی نہیں کر سکتا جو ایسا سوچے گا بھی وہ دائرہ ایمان سے فارغ، مرتد واجب قتل ہو گا ہمارے پیغمبر نے نظام مصطفیؐ نافذ کیا صحابہ اکرام نے نظام مصطفی کے نفاذ کے لیے تپتی ریت میں قربانیاں دیں صرف نماز،روزہ، حج،زکوۃ کا نام اسلام نہیں ہے اسلام مکمل ضابطہ حیات ہے اسلام صرف مسلمانوں تک محدود نہیں اسلام اسلامی معاشروں کے اندر غیر مسلم کے حقوق کا بھی درس دیتا ہے آج ہم بڑے بڑے عہدوں پر چلے جاتے ہیں لیکن نظام مصطفی کی جب بات آتی ہے تو اس کا کوئی جواب کسی کے پاس نہیں ہوتا پاکستان کے اندر بڑی بڑی باتیں کی جاتی ہیں لیکن نظام مصطفی کے نفاذ پر سب خاموش ہوجاتے ہیں اسلام دشمن قوتیں پاکستان کے اندر نظام مصطفیﷺ کے نفاذ کو روکنے کے لیے متحرک ہو چکی ہیں لیکن علماء حق ہر جگہ نظام مصطفیؐ کے نفاذ، تحفظ کے لیے سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح ہونگے اسلامی نظام کے نفاذ سے ہی ملک میں خوشحالی آ سکتی ہے اسلامی نظام ہوگا تو ملک سے افراتفری کا خاتمہ ہو گا نظام مصطفیؐ ایک گھر سے لیکر سلطنت تک نافذ ہونا چاہیے، کانفرنس کے اختتام پر شہداء کشمیر، شہداء زلزلہ، گاؤں نوگراں کے مرحومین کے لیے فاتحہ خوانی کی گئی اور آزادی کشمیر کے لیے خصوصی دعا کی گئی۔۔۔۔۔

By ajazmir