368 Views

اُوڑی//شمالی کشمیر کے اُوڑی میں کنٹرول لائن پر واقع دھولنجا علاقے میں گذشتہ روز بارڈر سیکورٹی فورسز (بی ایس ایف) اہلکاروں نے جس پاکستانی کو لائن آف کنٹرول عبور کرنے کے بعد گولی ماری تھی اُس کی لاش بدھ کو بر آمد ہوئی ہے۔ سرینگر سے شائع ہونے اردو روزنامے کشمیر عظمی کے مطابق لاش کو اوڑی پولیس کے حوالے کیا گیا ہے اور اُسکی شناخت 39 سالہ کامران چک ولد محمد نذیرساکن بانڈی سوچیاں تحصیل ہٹیاں بالا پاکستانی زیر انتظام کشمیر کے طور ہوئی ہے۔
ایس ایچ او اوڑی محمد اشرف نے بتایا کہ لاش کا اوڑی سب ضلع اسپتال میں پوسٹ مارٹم کرایا گیا اور مزید کاروائی کے لئے اعلیٰ حکام کا انتظار ہے۔یاد رہے کہ منگل کے روزدھولنجا علاقے میں بی ایس ایف کی70ویں بٹالین سے وابستہ اہلکاروں نے کنٹرول لائن عبور کرنے والے کسی شخص کی نقل و حمل کے بعد اُس پر گولی ماری تھی۔
یاد رہے کہ کامران چک کا زہنی توازن ٹھیک نہیں جو منگل کے روز آزاد کشمیر کے ضلع جہلم ویلی کی یونین کونسل گوجربانڈی کے ملحقہ سرحدی علاقے پاہل سے غلطی سے لائن آف کنٹرول کراس کر کے مقبوضہ کشمیر چلا گیا جہاں پر بھارتی فورسز نے اسے گولی مار کر شہید کر دیا اور آج بدھ کے روز اسکی نعش گہری کھائی سے اپنے قبضہ میں لینے کے بعد اوڑی پولیس اسٹیشن کے حوالے کی تاحال کامران کی تدفین کے حوالہ سے کسی بھی قسم کی تصدیق نہیں ہو پائی اسکے ورثاء کا کہنا ہے کہ وہ گذشتہ کئی سال سے زہنی مریض تھا وہ ایل او سی کراس کر گیاوزیراعظم ،وزیر خارجہ پاکستان اس کی میت واپس منگوانے کے لیے اقدام کریں تانکہ ہم اسکی تدفین اپنے علاقے میں کر پائیں

Avatar

By ajazmir