111 Views

تھانہ پولیس چکار میں دس سالہ معصوم بچے پر انسانیت سوز تشدداے ایس آئی کے بعد تشدد میں ملوث دیگر 4 پولیس اہلکاروں کو معطل کر دیا گیا تشدد میں ملوث ایک پولیس اہلکار کسی بھی کارروائی سے بچ گیا۔تفصیلات کے مطابق اعلی پولیس حکام کی ہدایات کی روشنی میں دس سالہ فضل حسین تشدد کیس میں ایس پی جہلم ویلی نے فضل حسین تشدد کیس میں ملوث پولیس اہلکاروں کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے اے ایس آئی علی اصغر عباسی کے بعد تھانہ پولیس چکار کے مزید 4 اہلکاروں شکورمغل، بشیر، فواد خان اور خواجہ احسن شریف کو معطل کرکے لائن حاضر کردیا ہے جبکہ ایک پولیس کانسٹیبل کو معطل نہیں کیا گیا جو تشدد میں تھاعوامی حلقوں کا کہنا ہے کہ صرف معطلیوں سے کام نہیں چلے گا جن با اثر افراد نے معصوم بچے پر تشدد کروایا ان سمیت پولیس اہلکاروں کے خلاف ایف آئی آر درج کر کے انھیں گرفتار کیا جائے اگر پولیس نے مظلوم اور غریب خاندان کو دباﺅ ڈال کر راضی نامہ پر راضی کرنے کی کوشش کی تو ایک بار پھر عوام کا پولیس سے اعتماد اٹھ جائے گا غریب شخص سے بچے کو چھڑانے کے عوض لیے گئے پچاس ہزار روپے بھی تاحال غریب خاندان کو نہیں مل پائے پولیس نے ڈی ایچ کیو ہسپتال ہٹیاں بالا سے بچے کا میڈیکل کروا لیا ہے جس کی رپورٹ تاحال ڈاکٹرز نے اس کی رپورٹ نہیں دی دوسری طرف بااثر افراد اور پولیس اہلکاران اپنے آپکو بچانے کے لیے ہر ممکن کوششوں میں مصروف ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Avatar

By ajazmir