128 Views

مظفرآباد( پی آئی ڈی)09جولائی2020
وزیر اعظم آزاد جموں وکشمیر راجہ محمد فاروق حیدرخان نے ہدایت کی ہے کہ آمدہ مون سون کے پیش نظر جامع منصوبہ بندی وضع کرتے ہوئے حکمت عملی ترتیب دی جائے ارلی وارننگ سسٹم کو مزید بہتر کیا جائے اور SDMAکے کنٹرول رومز کو فعال اور موثر بنایا جائے ۔ ایمرجنسی آپریشنز کے حوالہ سے پاک فوج سے ملکر پالیسی ترتیب دی جائے ۔ اس سال مون سون کی بیس فیصد زیادہ بارشیں ہونے کا امکان ہے جس کی وجہ سے نقصان کا اندیشہ ہے ۔ تمام محکمہ جات ہنگامی بنیادوں پر اقدامات اٹھاتے ہوئے پالیسی مرتب کریں اور SDMAکے ساتھ ہر ممکن تعاون یقینی بنائیں ۔ قدرتی آفات کا مقابلہ نہیں کیا جا سکتا لیکن حفاظتی تدابیر سے ان سے بچا جا سکتا ہے۔ ندی نالوں کے گرد غیر قانونی اور سرکاری جگہوں بنائی گئی تعمیرات کو مسمار کرتے ہوئے اراضی کوواگزار کروایا جائے ۔ نشیبی آبادی کو بروقت اطلاع دینے کا موثر نظام بنایا جائے ۔ SDMAکا ایمرجنسی سسٹم ہمہ وقت الرٹ رہے ۔ قدرتی آفات سے نمٹنے کےلئےSDMAکی استعداد کار میں اضافہ کرینگے ۔ وزیر اعظم آزادکشمیر سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے اعلیٰ سطحی اجلا س سے خطاب کررہے تھے ۔ اجلاس میں وزیر تعمیرات عامہ چوہدری محمد عزیز، وزیر سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی احمد رضاقادری، سیکرٹری SDMA شاہد محی الدین قادری، سیکرٹری ورکس غلام بشیر مغل، ڈویژنل کمشنرز، ڈپٹی کمشنرز نے شرکت کی ۔ وزیر اعظم آزادکشمیر نے نے کہاکہ مشکل حالات میں محکمہ جات دوسرے محکمہ جات کی خدمات بھی حاصل کر سکتے ہیں۔ رواں سال معمول سے بیس فیصد زیادہ بارشیں ہونے کا امکان ظاہر کیا جا رہا ہے اس لیے تمام محکمہ جات ایمرجنسی بنیادوں پر اقدامات اٹھائیں اور موثر حکمت عملی ترتیب دیں تاکہ کم سے کم نقصان ہو۔ وزیر اعظم نے کہاکہ آزادکشمیر میں ایک لاکھ سرکاری ملازمین ہیں جن میں سے گزشتہ کئی ماہ سے صرف20فیصد ہی دفاتر آتے ہیں اور سرکاری نظام چل رہا ہے ۔ آزادکشمیر میں پہلے ہی ضرورت سے زیادہ ملازم ہیں اس لیے ان سے اس مشکل صورتحال میں ان سے کام لیا جا سکتا ہے ۔انہوں نے کہاکہ ہندوستان آزاد کشمیر کی تعمیر وترقی سے خائف ہے اور ایشین ڈویلپمنٹ بینک اور دیگر عالمی اداروں کو آزادکشمیر میں کام کرنے سے روکتا ہے ۔ ہم نے آزادکشمیر کو رول ماڈل بنانا ہے ۔ وزیر اعظم نے اس موقع پر سٹیٹ ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کی محدود وسائل کے باوجود کارکردگی کو سراہتے ہوئے کہاکہ ادارے مالیاتی اور دیگر معاملات ترجیحی بنیادوں پر حل کرینگے ۔ مون سون کے حوالے سے ہنگامی بنیادوں پر اقدامات اٹھائے جائیں اور تمام اضلاع کے اندر حکمت عملی بنائی جائے
مظفرآباد (پی آئی ڈی ) 9جولائی 2020
مسلم لیگ ن آزادجموں و کشمیر کے صدر وزیراعظم راجہ محمد فاروق حیدر خان نے کہا ہے کہ مادر ملت محترمہ فاطمہ جناح کی ملک و قوم کیلئے عظیم خدمات کے اعتراف میں مظفرآباد میں ان کی یادگار تعمیر کی جائے گی۔محترمہ فاطمہ جناح کا شمار تحریک پاکستان کے اکابرین میں ہوتا ہے ہمیں ان کی خدمات کو یاد رکھنا چاہیے محترمہ فاطمہ جناح جیسے کردار صدیوں میں پیدا ہوتے ہیں جنہوں نے اپنا سب کچھ اپنی قوم اور اپنے ملک کیلیے وقف کر دیا جمہوریت کے لیے ان کی خدمات ناقابل فراموش ہیں ان اپنے مقاصد کی تکمیل کے لیے غداری کا بھی الزام لگایا گیا عوام کے ساتھ ان کی محبت فقید المثال تھی وہ کشمیر بھی تشریف لائیں 1944 میں بھی قائد اعظم کے ساتھ انہوں نے کشمیریوں کے دل جیتے۔وزیراعظم راجہ محمد فاروق حیدر خان نے محترمہ فاطمہ جناح کی برسی کے موقع پر انہیں شاندار الفاظ میں خراج عقیدت پیش کرتے ہوے کہا کہ مظفرآباد میں خواتین کے لیے انہوں نے ہسپتال بھی قائم کیا تھا ہم مادر ملت کو سلام پیش کرتے ہیں موجودہ دور میں وہ خواتین کے لیے مشعل راہ ہیں انہوں نے تحریک پاکستان کے دوران بانی پاکستان کا بھرپور ساتھ دیا اور انہیں کی بدولت برصغیر کے گلی کوچوں میں مردوں کے ساتھ ساتھ خواتین بھی تحریک پاکستان میں سرگرم ہوئیں۔انہوں نے کہا محترمہ نے 1940 میں اس تاریخی اجلاس میں شرکت کی جس میں قرارداد پاکستان منظور ہوئی۔انہوں نے کہا کہ محترمہ خواتین کی تعلیم پر بہت زور دیتی تھیں انہوں نے 1955 میں خاتون پاکستان کے نام سے کراچی میں سکول کھولا جو بعد میں کالج اور پھر یونیورسٹی بنا۔وزیراعظم نے کہا کہ محترمہ کو آزادکشمیر کی تعمیر و ترقی اور تحریک آزادی کشمیر سے بڑی دلچسبی تھی ان کے کہنے پر ہی ریاست کے ایک عظیم بیٹے جناب کے ایچ خورشید نے آزادکشمیر کی صدارت کا منصب سنبھالا تھا۔انہوں نے کہا کہ محترمہ کو لحد میں اتارنے کا اعزاز بھی جناب کے ایچ خورشید کے حصے میں ہی آیا تھا۔وزیراعظم نے کہا محترمہ فاطمہ جناح نے کوہالہ کے مقام پر ایک پل۔کا افتتاح بھی کیا تھا ۔انہوں نے کہا میڈیا کو چاہیے کہ وہ قوم کو محترمہ فاطمہ جناح کی خدمات سے آگاہ کرے جس کے لئے ٹیلی تھان نشریات ہونی۔چاہیے تھیں۔انہوں نے کہا افسوس یہ ہے کہ جنہیں یاد رکھنا چاہیے ہم انہیں یاد نہیں رکھتے میڈیا کو تحریک پاکستان کے جید اکابرین کیلیے کوئی قومی پالیسی بنانی چاہیے۔انہوں نے کہا محترمہ۔سیاسی بصیرت میں اپنے بھائی قائداعظم محمد علی جناح کی حقیقی جانشین تھیں۔انہوں نے کہا کہ قائداعظم نے ایک موقع پر فرمایا تھا کہ وہ اپنی بہن کی سال ہا سال کی پرخلوص خدمات اور مسلمان خواتین کی آزادی کیلیے انتھک جدوجہد کی وجہ سے ان کے انتہائی مقروض ہیں۔ایک اور موقع پر بانی پاکستان نے کہا کہ جس دنوں مجھے برطانوی حکومت کے ہاتھوں کسی۔بھی وقت گرفتاری کی توقع تھی تو ان دنوں میری بہن ہی تھی جو میری ہمت بندھاتی تھی جب حالات کے طوفان مجھے گھیر لیتے تھے تو میری بہن میری حوصلہ افزائی کرتی۔انہوں نے کہا محترمہ۔فاطمہ جناح نے آمریت کے خلاف تاریخی جدوجہد کی اور پورے ملک میں جمہوریت کی۔بحالی کیلیے تحریک چلائی۔انہوں نے کہا انشاءاللہ محترمہ فاطمہ جناح کی۔شایان شان یادگار مظفرآباد میں تعمیر کی۔جائے گی تاکہ میرے بیٹے اور بیٹیاں اس عظیم خاتون کی ملک و قوم کیلئے عظیم خدمات سے آگاہ رہیں اللہ رب العزت مادر ملت کے خوابوں کی تعبیر کرے اور تحریک تکمیل پاکستان منطقی انجام تک پہنچے

Avatar

By ajazmir